Who is Imam Jafar Sadiq and Imam Abu Hanifa? || shahmeer blog tv

Who is Imam Jafar Sadiq and Imam Abu Hanifa? || shahmeer blog tv


وہ  کون سے امام  ہے  جنہوں  نے یہودیوں  کو  موں  طور  جواب  دیا  ان  کے  الٹے سوالوں  کا. بنے  رہے

ایک  مرتبہ  کا  زکر  ہے  ایک   یہودی  بگداد  کے  بزارو  میں  گہم  رہا  تھا  ارو  کھ  رہا  تھا  کے  اگر  تم  پکے  مسلمان  ہوں  تو  میرے  سوالوں  کے  جواب  دو  ان  مسلمانوں  نے  کہا  پوچھو  اس  نے  ان  مسلمانوں  سے  ١٠
سوال  پوچھے  ان  میں  سے  ٣ سوالوں  کا  زکر  میں  اپنی  پچلی پوسٹ  میں  کر  چکا  ہوں  تو  اپ  پہلے  وہ  دهک  لے  ورنہ  اس  پوسٹ  کی  اپ  کو  سمج  نہیں  ای  گی  پھر جب اس  یہودی  نے  اپنے  سوال  رہکے  تو کسی  بھی  مسلمان  کے  پاس  ان  سوالوں  کا  جواب  نہیں  تھا  وہ  سوال  کچھ  یو  تھے اس  یہودی  نے  اپنا ١ سوال  کیا\ بتاو  تم  کہتے  ہو  جنت  میں سب  کچھ  ملے  گا  تمہیں  کسی  چیز  کی  کمی  نہیں  ہو  گی  تو  بتاو  جب  وہا  تم  کھانا  خاو   گے  تو  فضلہ  کہا  کرو  گے  کیوں  کے  جنت  جیسی پاک  جگا  پے  تو  نہیں  کر  سکتے  اس  نے  اپنا  ٢ سوال  کیا  کے  بتاو تمہارا  ایمان  ہے  کے  الله  نے  جنہوں  کو  آگ  سے  پیدا  کیا ہے  تو  بتاو  تم  کہتے  ہو  جو  گہنگار  ہے  ان  کا  ٹھکانہ  دوزک  ہے  مجہے  بتاو  جن  تو  آگ  سے  پیدا  کیا  ہے  تو  دوزک  کی  آگ  کا  اثر  ان  پر  کیسے  ہو گا پھر اس  یہودی  نے  اپنا  ٣ سوال  کیا  کے  بتاو تم  مانتے  ہوں  الله  ہے  تو  بتاو  وہ  کس  چیز  سے  مل  کے  بنا  ہے  کیا  وہ  لوہے  کا ہے  کیا  پانی  سے  بنا  ہے  بتاو  وہ  ہے  کیسا  نوزبلا  وہ  یہودی  اپنے  سوال  بارے  گرور  سے  روز  اکر  پوچھتا  اور  سرے  مسلمان  اس  یہودی  کی  شکل  دہکتے  رہ  گے پھر  ایک  دن  وہ  یہودی  اپنے  معمول  کے  متبِک  اکر  اپنے  سوال  پوچھنے  لگا  اس  دن  جب  وہ  اپنے  سوال  پچھ  رہا  تھا  تو  بزار  کے  مجمے  سے  ایک  ١١ سالہ  بچا  اٹھا  اور  کہنے  لگا  کے  تم  اپنے  سوالوں  کے  جواب  چتے  ہوں  میں  دو  گا  وہ  یہودی  سمجہ  کے  بچا  مذاک  کر  رہا  ہے  لیکن  جب  اس  نے  بچے  کے  موں  پے  مذاک  جھلکتا  نہیں  دہکا  تو  اس  نے  کہا  ٹھک  ہے  بتاو  اس  یہودی  نے  اپنا  سوال  کیا  کے  بتاو  جنت  جیسی  جگا  پر  جب  تمھے  کوئی  حجت  نہیں  ہو  گی  تو  پھر  تم  کھہ  پی  کر  فضلہ  کہا  کرو  گے  اس  ١١ سالہ  بچے  نے  کہا  تم  ٩ مہینے  اپنی  ماں  کے  پیٹ  میں  رهتے  ہوں  وہا  تم  کہتے  ہو  پتے  ہوں  لیکن  فضلہ  نہیں  کرتے  تو  کیسے  ہو  سکتا  ہے  تم  جنت  جیسی  پاک  جگا  پر  فضلہ  کرو  یہ  جواب  سن  کر  اس  یہودی  کے  چرے  پر  ایک  قسم  کا  ڈار  سا  آگیا  اس  جواب  کے  بعد  مجمے  کی  سری  امید  اس  ١١ سالہ  بچے  کے  اپر تھیں سب  مسلمانوں  نے  نرے تکبر  کی  آواز  بلند  کی  اس  یہودی  نے  پھر  اپنا  ٢ سوال  کیا  کے  بتاو  تمھارے  دین  کے  متابِک  جنات  کو  آگ  سے  پیدا  کیا  ہے  تو  بتاو  ان کو  دوزک  کی  آگ  کیسے  اثر  کرے  گی اس  ١١ سالہ  بچے  نے  کہا  اس  سوال  کا  جواب\ دینے  کے  لیے  مجھے  ایک  فیل  کرنا  ہو  گا  اپ  کی  اجازت  ہو  تو  جسے  ہی  اس  یہودی  نے  اجازت  دی اس  ١١ سالہ  بچے  نے  زمین  سے  مٹی  اٹھا  کر  اس یہودی  کی  آنکھ  میں  ماری  وہ  یہودی  گسے سے  کہنے  لگا  کے  یہ  کیا  کر  رہے  ہوں  تم اس  ١١ سالہ  بچے  نے  کہا  جسے  تم  مٹی  سے  بنے  ہو  لیکن  جب  مانیں  اپ  پر  مٹی  ماری  جسے  اپ  کو  تکلیف  ہوئی  اسی  ترھا  جنات  کو  بھی  دوزک  میں  تکلیف  ہو  گی  اس  جواب  کو  سن  کر  پرے  بازار  کے  مسلمانوں  نے  نرے تکبیر کی  آواز  بلند  کی  پھر  اس  نے  اپنا  ٣ سوال  کیا  کے  بتاو  اگر  الله  ہے  تو  وہ کس  چیز  سے  بنا  ہے  کیا  وہ  لوہے  کی  ترہا  ہے  کیا  وہ  پانی  کی  ترہا  ہے  یا  کسی  اور  ترہا  اس  ١١ سالہ  بچے  نے  کہا  کیا  آپ  کسی  اسے  شخص  کے  پاس  بیھٹے  ہے  جو  چند  لمحے  بعد  مر  جانے  والا  ہوں   اس  یہودی  نے  کہا  ہان  تو  پھر  اس  ١١ سالہ  بچے  نے  کہا  تو  بتا ے ن اس  کی  روح  کسی  تھیں  کیا  وہ  لوہے  جیسی  تھی  کیا  وہ  پانی  جیسی  تھی  اس  یہودی  نے  کہا  مجھے  کیا  پتا  مینے  اس  کی  روح  کسی  تھی  تو  پھر  اس  ١١ سالہ  بچے  نے کہا  جسے  تم  اس  روح  کو  نہیں  دھک  پے  تو  اس  الله  کو  کیسے  دھکوں  گے کہا ٹام کہتے  ہو الله  کو  دہکنا  ہے میں دھکوا و  گا مگر  پہلے تم  وہ  درد  دھکاوہ  جو  میںنے تمھے  مٹی  مار  کر جو درد   الله  ہمے  اپنے  ہفو ایمان  میں  رهکے
آمین
کہا  جاتا  ہے  وہ  بچا  امام  جعفر صدیق  یا  امام  ابو  حنیفہ  تھیں 

Post a Comment

0 Comments